Qazi Muhammad Shamashad Nabi Faruqi “Saqi Farooqi”: Transalated by Huzaifa Pandit

Saqi Farooqi

BIO

Saqi Farooqi real name Qazi Muhammad Shamashad Nabi Faruqi is a prominent UK-based Urdu and English poet. His works and writings in Urdu have been widely published around the world with several of his books winning awards and accolades. Saqi Farooqi was born in Gorakhpur in 1936. His family migrated to Bangladesh and then to Karachi. He later moved to London. He has published several volumes of poetry, including one book in English, as well as substantial volume of literary criticism. In her influential anthology of Modern Urdu Literature, Mehr Afshan Farooqi marks him as “probably the most original voice in modern Urdu poetry.” She notes “he comes across as a poet whose mind is tortured by conflicting emotions and desires”

Huzaifa Pandit

.
BIO

Huzaifa Pandit was born and raised in Kashmir. He is pursuing a PhD on “Faiz Ahmed Faiz, Agha Shahid Ali and Mahmoud Darwish – Loss, Lyricism and Resistance” at University of Kashmir. His poems, translations, essays and papers have been published in various journals like Indian Literature, PaperCuts, CLRI, Punch and Muse India. He is fond of Urdu poetry, Urdu and old Bollywood music. He hopes to publish a book of his translations soon.

(Translated from the original Urdu into English)

.

..

.
.
.
A wounded Tomcat in an empty sack

Jan Mohamad khan
The journey is certainly not easy
My breath is emptied
In the frayed knots of this empty paddy sack
These strong bars of jute are chiselled in my heart
The coins of soiled moon crowd- clink, clink
in the pallid bowls of my eyes
The tentacles of night run riot in my body.
Who will stoke the fire today
On your naked back?
Who will parade the embers?
And who will water the bleeding flowers
Of struggle in cruel bloom?
The life in my fiery claws has ebbed out
The journey is quite tiring today
In a few minutes
This straitjacketed lane will snap
and drown in a dirty pond
I will cuddle with the solitude of my coffin
And doze
I will be water, mere water
I have to sleepwalk in a deep sleep
And you who can’t see this sack
Who doesn’t recognise his sack
Jan Mohamad khan
The journey is not easy

خالی بورے میں زخمی بلا

ساقی فاروقی
جان محمد خان
سفر آسان نہیں
دھان کے اس خالی بورے میں
جان الجھتی ہے
پٹ سن کی مضبوط سلاخیں دل میں گڑی ہیں
اور آنکھوں کے زرد کٹوروں میں
چاند کے سکے چھن چھن گرتے ہیں
اور بدن میں رات پھیلتی جاتی ہے۔۔۔
آج تمہاری ننگی پیٹھ پر
آگ جلائے کون
انگارے دہکائے کون
جد و جہد کے
خونیں پھول کھلائے کون
میرے شعلہ گر پنجوں میں جان نہیں
آج سفر آسان نہیں
تھوڑی دیر میں یہ پگڈنڈی
ٹوٹ کے اک گندے تالاب میں گر جائے گی
میں اپنے تابوت کی تنہائی سے لپٹ کر
سو جاؤں گا
پانی پانی ہو جاؤں گا
اور تمہیں آگے جانا…
۔۔۔اک گہری نیند میں چلتے جانا ہے
اور تمہیں اس نظر نہ آنے والے بورے۔۔۔
۔۔۔اپنے خالی بورے کی پہچان نہیں
جان محمد خان
سفر آسان نہیں

.

Fragrance of Death

Separation
is the brook that feeds
the blood greased river of love
fidelity
has clung
to the coral branch of memory
heart, comfort and lovers
all crouch within the orbit of fear
The air reeks of stale kisses
Broken mirrors of dreams bleed in eyes
Sapphires of tears
Hide in the isles of hearts
A drizzle of sorrow spurts through the veins
But the seeds of sorrow will continue to fall
But people will continue to be separated
These are old sorrows
These seasons of union and separation
are old seasons
new-fangled sorrows have set out
to haggle with old sorrows
bloated lips sport a new blue
new seeds have begun
to be sown in heart
enemy skies crackle
with whispers of enemy planes
slums of stars lie torched
and only dark shadows
appear on the radar of empty eyes
We are mad from the fragrance of death
We drift in the black sea of destruction
Crouched inside the red submarines of hope.
From one shore to other
Hangs a pall of thick, bitter smoke
Earth, where is the magic of your fragrance?

موت کی خوشبو

جدائی
محبت کے دریائے خوں کی
معاون ندی ہے
وفا
یاد کی شاخ مرجاں سے
لپٹی ہوئی ہے
دل آرام و عشاق سب
خوف کے دائرے میں کھڑے ہیں
ہواؤں میں بوسوں کی باسی مہک ہے
نگاہوں میں خوابوں کے ٹوٹے ہوئے آئنے ہیں
دلوں کے جزیروں میں
اشکوں کے نیلم چھپے ہیں
رگوں میں کوئی رود غم بہہ رہا ہے
مگر درد کے بیج پڑتے رہیں گے
مگر لوگ ملتے بچھڑتے رہیں گے
یہ سب غم پرانے
یہ ملنے بچھڑنے کے موسم پرانے
پرانے غموں سے
نئے غم الجھنے چلے ہیں
لبوں پر نئے نیل
دل میں نئے پیچ پڑنے لگے ہیں
غنیم آسمانوں میں
دشمن جہازوں کی سرگوشیاں ہیں
ستاروں کی جلتی ہوئی بستیاں ہیں
اور آنکھوں کے رادار پر
صرف تاریک پرچھائیاں ہیں
ہمیں موت کی تیز خوشبو نے پاگل کیا ہے
امیدوں کی سرخ آب دوزوں میں سہمے
تباہی کے کالے سمندر میں
بہتے چلے جا رہے ہیں
کراں تا کراں
ایک گاڑھا کسیلا دھواں ہے
زمیں تیری مٹی کا جادو کہاں ہے

.

Tale of a Rabbit

Dance
Evening stands and calls
Come out of the tents of yellow grass
And brown bushes
Soft breezes flutter by the frills of your hair
And crackle rabbit babbity jokes in long ears
Red Red buds
Green Green Grass
Slithering canopies of creepers…
A godown has been set up in the jungle, silly
Put the nose-pin of its fragrance
In your naïve nostrils
and dance.
Dupe every danger
A hundred doors open
Under the thieving stones
Cosy beds of fresh saffron flowers
The whole field is yours
To conquer and make merry
Death
And you both left your bedrooms
and lay now
bathed in warm blood
What indeed was the need for this?
There you were the emperor of the world
What did you lack?
Why did you wish
To conquer
the bolted wall of dreams?
What allure
does this curiosity hold?
Why do you desire to subdue the unknown?
What fuels this old wishfulness?
Why do those charmed streets
snuggled behind
this flower bed tempt us?

خرگوش کی سرگزشت

رقص
شام کھڑی ہے
بھوری جھاڑیوں،
پیلی گھاسوں کے خیموں سے باہر نکلو
نرم ہوائیں بالوں کی جھالر سے گزرتی
لمبے لمبے کانوں میں خرگوشی کرتی ہیں
سرخ کونپلیں
سبز پتیاں
سانپ چھتریاں۔۔۔
جنگل میں گودام کھلا ہے پاگل
اپنے بیکل نتھنوں میں
اس خوش بو کا چھلا ڈال کے رقص کرو
ہر خطرے کو چکمہ دو
چور چٹانوں کے نیچے
سو دروازے ہیں
کیسر پھولوں کے بستر ہیں
دھوم مچانے کو سارا میدان پڑا ہے
موت
اور تم اپنے شبستاں چھوڑ کر
اس بیاباں کے اندھیرے راستے پر
خون میں لت پت پڑے ہو
اس کی آخر کیا ضرورت تھی
وہاں پر تم جہاں کے حکمراں تھے
کیا نہیں تھا؟
خواب کی دیوار کیوں کر پار کرنا چاہتے تھے
اس تجسس میں کشش کیسی ہے
نامعلوم کو تسخیر کی تمنا کس لیے ہے
اس پرانی آرزو مندی میں کیا ہے

اس خیاباں کے عقب میں
وہ جو پر اسرار دنیائیں بسی ہیں
وہ ہمیں کیوں کھینچتی ہیں؟

.

Conversation with a Palm Tree

Why do you stare at me with green surprise?
The same hobby of collecting butterflies
Drove me here
But the butterflies are so wily.
they hid in unfamiliar jungles
On the broken wings of migration
Wrapped in the warm pashmina shawls of breeze
out of my fear.

And tired and exhausted on my return
avoiding a rolling stone
I noticed this side
And felt
That this mountain is the shoe of some giant sized angel
Wearing a brownish sock over one foot
you are limping, trying to wear the shoe
you probably lost the other leg
In world war two.

My net is empty
yet my heart overflows with joy
You stand on the bald hillside
exactly the same way
and with exactly the same impish simplicity
wearing your green wig.
This ravishing spectacle left me spellbound.
So, I have come closer to inspect it
Please stir your fans
and gift some cool breeze from your hem to me
I am tired indeed!

پام کے پیڑ سے گفتگو

مجھے سبز حیرت سے کیوں دیکھتے ہو
وہی تتلیاں جمع کرنے کی ہابی
ادھر کھینچ لائی
مگر تتلیاں اتنی زیرک ہیں
ہجرت کے ٹوٹے پروں پر
ہوا کے دوشالے میں لپٹی
مرے خوف سے اجنبی جنگلوں میں
کہیں جا چھپیں۔۔۔

اور تھک ہار کر واپسی میں
سرکتے ہوئے ایک پتھر سے بچتے ہوئے
اس طرف میں نے دیکھا
تو ایسا لگا
یہ پہاڑی کسی دیو ہیکل فرشتے کا جوتا ہے
تم کتھئی چھال کے تنگ موزے میں
ایک پیر ڈالے
یہ جوتا پہننے کی کوشش میں لنگڑا رہے۔۔۔
دوسری ٹانگ شاید
کسی عالمی جنگ میں اڑ گئی ہے

مرا جال خالی
مگر دل مسرت کے احساس سے بھر گیا
تم اسی بانکپن سے
اسی طرح
گنجی پہاڑی پر
اپنی ہری وگ لگائے کھڑے ہو
یہ ہیئت کذائی جو بھائی
تو نزدیک سے دیکھنے آ گیا ہوں

ذرا اپنے پنکھے ہلا دو
مجھے اپنے دامن کی ٹھنڈی ہوا دو
بہت تھک گیا ہوں

.

To a pig

It was a magical afternoon
breathing in the grass draped meadow.
The grass reflected the sun rays.
Snout dug deep into these rays
you were strutting around.

I – your mortal enemy
sporting hush-puppy shoes of my ego
clutching a new lime-stick of my grouse
sat on the bench of superiority
Shy, morose
trying to rid myself
of an old lie
I called out softly to you.
When I called out to you
you looked at me
with your haphazard squishy eyes
with a miraculous glance
I was revived –
my eyes sparkled, and butterflies
fluttered inside me.

And in that moment of union
In the background of that glorious day
you were surprised
immersed in yourself,
in your eternal ugliness,
you resembled a beautiful cheetah.

Hesitating
like Native Americans
listening to the melody of the earth
you came near me
staring at me in disbelief.
I wished to reassure you….
and restore the bond of innocence.
When I sat caressing you with my rock-hard hands
slipping my fingers
through your coarse hairs
I felt an incredible happiness
a renewed pleasure.
The bow spring of hate
nestled deep in the depths of my heart
broke
The cogs started moving again
and I kept melting.

That friendship of ours
The birthday of our victory
That bewitching afternoon
Breathing in the breeze in the grass draped meadow
The green soil sprouts light.

ایک سور سے

وہ طلسمی دوپہر تھی
سانس لیتے گھاس کے میدان میں
سبز مٹی سے شعاعیں اگ رہی تھیں
اور تم کرنوں میں
اپنے تھوتھنے گاڑے ہوئے
دندناتے پھر رہے تھے
میں تمہاری جان کا دشمن
انا کے ہش پپی جوتے پہن کر
اپنے کینے کا نیا کمپا لیے
برتری کے بنچ پر
محجوب سا بیٹھا ہوا
اک پرانے جھوٹ سے
دامن چھڑانا چاہتا تھا
میں نے دھیرے سے تمہیں آواز دی۔۔۔
آواز دی تو
اپنی ٹیڑھی میڑھی آنکھوں سے
مجھے تم نے عجب عالم میں دیکھا تھا کہ بس
میں جی پڑا تھا
میری آنکھیں جگمگا اٹھی تھیں
میرے اندر تتلیاں اڑنے لگی تھیں

اور ملن کی اس گھڑی میں
اس سنہرے دن کے پس منظر میں
تم حیراں سے
اپنی دھن میں
اپنی جاوداں بد صورتی میں
ایک چیتے کی طرح سے خوبصورت لگ رہے تھے

ڈرتے ڈرتے
حیرتی رڈ انڈین امریکیوں کی طرح
دھرتی کی دھمک سنتے ہوئے
تم پاس آئے
پاس آکر بے یقینی سے مجھے تکنے لگے تھے
میں تمہیں تسکین دینا۔۔۔
۔۔۔پھر سے بھل منسی کا رشتہ جوڑ لینا چاہتا تھا
اور اپنے سنگ بستہ ہاتھ سے
جب تمہیں سہلا رہا تھا
اور تمہارے کھردرے بالوں میں
اپنی انگلیاں الجھا رہا تھا
ایک البیلی مسرت
اک نئی لذت ملی
وہ جو نفرت کی کمانی
دل کی تہہ میں گڑ گئی تھی
ٹوٹتی جاتی تھی
میرے اندر کی کلیں کھلنے لگی تھی
میں پگھلتا جا رہا تھا

وہ ہماری دوستی۔۔۔
وہ ہماری فتح مندی کا جنم دن۔۔۔
وہ طلسمی دوپہر۔۔۔
۔۔۔سانس لیتے گھاس کے میدان میں
سبز مٹی سے شعاعیں اگ رہی تھیں

*****

To read an interview with Huzaifa Pandit CLICK HERE

.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Connect with Facebook