Naseer Ahmed Nasir: Translated by Kamran Awan

Naseer Ahmed NasirBIO

Naseer Ahmed Nasir, born on 1st April 1954 in a nondescript village Nagrian in Gujrat district of Punjab, Pakistan, is one of the most eminent, distinct, cultured and thought provoking poets from Pakistan. He is considered a trendsetter poet of modern Urdu poetry among his contemporaries. His poetry has been published in almost all distinguished Urdu literary journals of the Sub-Continent over the last 40 years and several international anthologies and magazines as well. He has 6 poetry collections to his credit and more collections are in the pipeline. His poetry has been translated into various international languages such as English, Spanish, Russian, Romanian, Uzbek, Persian etc. Recently a collection of his poems translated into English by Dr. Bina Biswas titled ” A Man Outside History ” has been published by Lifi Publications New Dehli India. He was founding editor of a highly reputed Urdu literary magazine “Tasteer” and a member of International Writers and Artists Association, USA (MIWA). Now  permanently settled in Rawalpindi, Pakistan.

 

Kamran AhmedBIO

Kamran Awan (Real name, Kamran H. Alavi), a banker by profession, was born in Sargodha in the province of Pakistani Punjab on 11th August 1972. He spent his early years of life in Tripoli- Libya and Karachi-Pakistan before relocating permanently to Lahore in 1990. Completed his education from Forman Christian College and University of the Punjab, Lahore. Apart from literary activities, Kamran is also interested in Outdoor activities (Horse Riding, Trekking, Camping, Traveling, etc), Movies, and Cryptozoology. An ardent fan of Rudyard Kipling and Gabriel García Márquez, Kamran also admires the fictional works of V.S. Naipaul, Orhan Pamuk and Michael Crichton among many other contemporary writers. Among the poets, Kamran loves to read the poems of Ibn-e-Insha and Naseer Ahmed Nasir in Urdu, while Pablo Neruda and W.S. Merwin are his favorites among non Urdu poets. Kamran has translated many Urdu poems of Naseer Ahmed Nasir into English. Apart from translations, he has penned down some poems in Urdu too. Kamran is currently working as an Assistant Vice President in a major Bank of Pakistan.

 

 

(All original poems written in Urdu by Naseer Ahmed Nasir and translated into English by Kamran Awan)

 

ریحانے جباری

میں نے قتل کیا ہے
ایک مرد کو
جو میرے جسم میں چھید کرنا چاہتا تھا
نہیں، ایک مرد کی پرچھائیں کو
میں نے قتل کیا ہے
ہاں میں نے قتل کیا ہے
تیز دھار چاقو سے
تا کہ خون بہے
اور بہتا رہے
چوتھی منزل سے
تفتیش گاہ کے تہہ خانے تک
جہاں مجھے کئی بار زندہ مار ڈالا گیا
اور میں نے لکھ دیا
بیانِ حلفی میں
جو انہوں نے کہا
تا کہ بادوک زندہ رہے
اور کسی اور ٹین ایجر کو چیرا توڑا نہ جا سکے
جیل میں اور عدالت میں
موجود ہونے کے باوجود
خدا مجھے نہیں بچا سکا
خدا انسانوں کے لیے بنائے ہوئے قانون کے ہاتھوں مجبور ہے
آنکھ کے بدلے آنکھ
کان کے بدلے کان
جسم کے بدلے جسم
لیکن پرچھائیں کے بدلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری، بادلوں کی چھاؤں جیسی، کم سِن روح کو پھانسی دے دی گئی
دیکھو تو، شب ختم ہونے سے قبل
میری صبح دار پر طلوع ہو چکی ہے
میرا بے سایہ جسم اب دھوپ چھاں کا محتاج نہیں رہا
ماں! مجھے دفن مت کرنا
قبروں کے شہر میں
ہوا کو دفن مت کرنا
اور ماتمی لباس پہن کر
رونا مت
میں بے نشان رہنا
اور بے اشک بہنا چاہتی ہوں
اس زمین پر کوئی جگہ ایسی نہیں
جہاں ہوا، ابر اور آنسوؤں کی قبر بنائی جا سکے
مٹی میرا جوف، میرا اُطاق نہیں
ماں !
دروازہ کھول
میرا راستہ ختم ہو گیا ہے

 

Reyhaneh Jabbari

I have killed
a man…
Who wanted to perforate into my body
Rather, silhouette of a man
I have killed
Yes, I have killed
with a sharp dagger
so that the blood may strain
and keep straining
from the fourth floor
to the basement of the interrogation cell
where I was thrown dead so many times, alive
And I confessed
whatever they asked me to
so that Baaduk may live and
yet another teenager doesn’t
get ripped and torn apart
In spite of being there
in the courtroom and in the prison
God was unable to save my skin
God is ordained by His own laws
made for the human beings
An eye for an eye
An ear for an ear
A body for a body
but what is for a shadow?
My fledgling soul was hanged
the soul, which was like the cloud cover
See, before the night ends
my dawn has broken on the gallows
My shadow less body no more needs
the sunshine or the shade
O mother! Do not inter me
In this necropolis
do not bury the wind
And don’t weep over me
wearing the mourning dress
I want to remain unmarked
and want to set sail tearless
Nowhere on this Earth is the place, where
The wind, the cloud and the tears can be buried
I do not belong to the dust
O mother!
Open the door
my trail has ended.

 


ہم بچے ہیں 

ہم بچے ہیں
ہم اسکول جاتے ہیں
پارکوں میں اچھلتے کودتے ہیں
کھلونوں سے کھیلتے ہیں
غباروں میں ہوا بھر کر خوش ہوتے ہیں
ہم متحرک فلمیں اور کارٹون دیکھتے ہیں
اور، چپس اور چاکلیٹس کھا کھا کر بیمار ہوتے رہتے ہیں
مگر باز نہیں آتے
ہم ضدی ہیں
لڑتے ہیں جھگڑتے ہیں
پھر ایک ہو جاتے ہیں
ہم دنیا کو
اپنی آنکھوں سے،
اپنے عالمِ رُویا جیسا دیکھنا چاہتے ہیں
اور بڑے ہو کر
اسے بدلنے کا عزم بالجزم رکھتے ہیں

ہم بچے ہیں
ہمارے ہاتھوں کا گداز
پلاسٹک کی بے جان چیزوں میں جان ڈال دیتا ہے
اور ہمارے بوسوں کا لمس
مُردہ چہروں کو زندہ کر دیتا ہے
ہم بچے ہیں
ہمیں جنت اور دوزخ کا نہیں معلوم
لیکن یہ دنیا ہمارے دم سے جنت ہے

ہم بچے ہیں
کالے یا گورے
پیلے یا براؤن
ہم ایک جیسے ہیں
ہم پوری دنیا کے بچے ہیں
پاکستان کے اسکولوں میں
ہم فی سبیلِ اللہ قتل ہو جاتے ہیں
علم حاصل کرنے کی پاداش میں
ہمارے پھولوں جیسے جسموں پر
گولیوں کا مینہ برستا ہے
کتابیں اور کاپیاں ہماری ڈھال نہیں بن سکتیں
روس اور امریکہ کی درس گاہوں میں
کسی بھی جنونی کے لیے ہم رقصِ مرگ کا سامان ہیں
فلسطین میں ہوائی حملوں سے ملبے کا ڈھیر بن جاتے ہیں
عراق اور یمن کی سڑکوں پر
آئے دن ہونے والے بم دھماکوں سے
ہمارے اجساد جابجا اجزاء کی صورت بکھرتے ہیں
اور ہمارے اعضائے رئیسہ بھرے ہوئے کچرے کے ڈرموں میں پڑے رہتے ہیں
افغانستان میں
بارودی سرنگوں سے کھیلتے ہوئے
ہم بھک سے اُڑ جاتے ہیں
ہم ہر جگہ مارے جاتے ہیں
ہمارا خون ایک جیسا ہے، چیتھڑے ایک جیسے ہیں
ہمارے آنسو ایک جیسے ہیں
توتلا پن ایک جیسا ہے
مر جانے والے بوسے ایک جیسے ہیں

ہم بچے ہیں
ہمارا باہر بھیتر ایک ہے
ہمارا خود سے کوئی ملک ہے نہ خدا نہ مذہب
ہمارا ملک وہی ہوتا ہے جہاں ہم پیدا ہوتے ہیں
ہمارا مذہب وہی ہے
جو ہمارے ماں باپ کا ہے
اور ہمارا خدا وہ ہے جو ہماری خُرد خیالی میں آتا ہے
ہمارا خدا ہماری طرح معصوم اور ننھا سا ہے
وہ ہمیں مارنے کا سوچ بھی نہیں سکتا
ہم بچے ہیں
دوزخ ہمارے تصور سے بالا ہے
ہماری اپنی دنیا، اپنی جنت ہے
ہمیں کسی اور جنت دوزخ کے چکر میں نہ ڈالو

ہم بچے ہیں
ہمیں بچے ہی رہنے دو
ہم کھلونا گنوں سے دنیا زیر کر سکتے ہیں
ہم پر اصلی گنیں مت چلاؤ
ہم جنت ہیں
ہمیں مار کر تم اور کون سی جنت کمانا چاہتےہو ؟

 

We Are Children

We are children
We go to our schools,…
hop in the parks,
play with our play stations and,
get amused by blowing air into the balloons
We watch animated movies and cartoons
And fall ill with our craving for
Chocolates and potato chips,
but still, we never give up
We are stubborn,
we fight with each other,
and reunite
We want to see this world,
with our own eyes
just like our dreamland
and have an iron will
to change it when we grow up

We are children
The softness of our hands,
Blow life in the listless plastic stuff
and the feel of our tiny kisses,
enlivens even the sternest of the faces
We are children
we don’t know anything
about Heaven and Hell
but, this world is no less than
a Paradise with our presence

We are children
black or white,
yellow or wheatish,
we are the same
We belong to the entire world
In the schools in Pakistan
we are killed in the name of God
as a consequence of seeking knowledge
Volleys of shots are let loose
on our flower like bodies
our books and notebooks cannot be our shields
We are nothing but an item
for some lunatics in their frenzied dance of death
in the educational institutions of Russia and America
We get buried under tons of rubble
by the aerial bombing in Palestine
In the bomb blasts occurring
every other day
on the streets of Iraq and Yemen
our bodies scatter here and there
in shreds
and our vital organs linger
in choked trash bins
Playing with the land mines
in Afghanistan
we get blown away just like that
We get killed everywhere
Our blood is the same,
pieces of our flesh are the same,
our tears are the same,
we lisp the same way,
our kisses that were slain,
are the same

We are children
we are alike,
from inside and outside
We have no country, no god, no belief
of our own
Ours is the country
where we are born
We go after the faith
of our mothers and fathers
Our god is the one
which comes in our mini-thoughts
Our god is innocent and small,
just like us
who cannot even think of killing us
We are children
Hell is far beyond our imagination
we have a world of our own
our own Paradise
Don’t get us into this
labyrinth of Heaven and Hell

We are children
And let us be children
We can overpower the world
with our toy-guns
don’t shoot us with the real guns
We are the Heaven,
What other Heaven you want to buy
by killing us?

 

 

گلوریا جینز میں شام 

آج کئی دنوں بعد
میں نے گلوریا جینز میں کافی پی ہے
اور آخری سِپ کے ساتھ
شام کو بھی انڈیل لیا ہے منہ میں
معدہ چاکلیٹی تنہائی سے لبا لب ہو گیا ہے
اور تم کاغذی مَگ ہاتھ میں پکڑے،
ہمیشہ کی طرح منہ کھولے، ساکت و صامت
میری طرف دیکھتے ہوئے سوچ رہی ہو
کہ آفرینش سے پہلے تھما ہُوا وقت
گلوریا جینز میں کیسے آ گیا ہے

جب میں نے تمہیں پہلی بار دیکھا تھا
شام اسی طرح مٹ میلی تھی
تاریخ ابھی شروع نہیں ہوئی تھی
زمین پر صرف جغرافیہ تھا
پرندوں اور جانوروں کا ترتیب دیا ہُوا
اور وقت سایوں کی طرح چلتا تھا
اور تم یونہی حیران و پریشان
میری طرف دیکھ رہی تھیں
تم نے کبھی خود کو باخبر نہیں رکھا
تمہیں نہیں معلوم کہ آجکل
میری دنیا بہت چھوٹی ہے
عالمِ نبات و حشرات کی طرح
جس میں چیونٹیوں کی قطاریں ہیں
اور پرندوں کے گھونسلے ہیں
لچک دار پلاسٹک کے سانپ اور کیڑے مکوڑے ہیں
اور آئس ایج کے زمانے سے کھیلنے والا
ایک ننھا نواسا ہے
اس میں حیرت کی کیا بات ہے ؟
سائبر ایج کے بچے
کھلونوں سے نہیں زمانوں سے کھیلتے ہیں
اور کھیل ہی کھیل میں
تاریخ کا آغاز ہو جاتا ہے
اور خاتمہ بھی ۔۔۔۔۔۔۔
پانی پر تیرتے مکان اور آبی شاہراہیں
اور مصوروں اور مجسموں کے شہر
آباد ہوتے ہیں اور اجڑ جاتے ہیں
باشاہوں کی میتوں کے ساتھ
ہزاروں مصاحبین زندہ دفن کر دیے جاتے ہیں
اور عہد بہ عہد صدیاں ویران ہو جاتی ہیں

تمہیں نہیں یاد کہ دوسری بار
میں نے تمہیں دشمن سرزمینوں کے عین وسط میں دیکھا تھا
زیرِ زمین سرنگوں میں
جھک کر چلتے ہوئے اور رینگتے ہوئے
اور غاروں کے اندر بنے ہوئے گھروں میں
جہاں سوراخوں اور چمنیوں سے تازہ ہوا آتی تھی
گہری نیند میں بھی
خوابوں کو کیمو فلاژ کیے ہوئے
اور ہونٹوں کے بیچ مسکراہٹ کی لکیر کھنچی ہوئی
جیسے دنیا کو دو حصوں میں تقسیم کر دیا گیا ہو
اب تو دنیا اتنے ٹکڑوں میں بٹ چکی ہے
کہ اسے دِکھانے کے لیے
ہاتھوں کی لکیریں بھی ناکافی ہیں

اور اِس جگہ
جہاں اب شہر آباد ہے
اور ہم بیٹھے ہوئے ہیں گلوریا جینز میں
میں نے تمہیں آخری بار دیکھا تھا
یہاں چند گھر تھے،
ایک راستہ تھا، ایک موڑ تھا، جہاں میں کھڑا تھا
بدترین شکستوں اور ہزیمتوں کے ساتھ
گلیاں سنسان اور چھتیں خالی تھیں
درختوں اور مکانوں سے دھواں اٹھ رہا تھا
اور تمہاری صرف ایک جھلک تھی
دشمن نے دلوں اور ذہنوں کے سارے رابطے جام کر دیے تھے
پہاڑوں نے ہمیں پناہ نہیں دی تھی
اور بادل بے وقت برس رہے تھے

اور آج پھر ۔۔۔۔۔ کئی یگوں بعد
ہم مِلے ہیں
گلوریا جینز میں
اور ہمیشہ کی طرح تمہیں نہیں معلوم
کہ ہم ایک ہی ہاؤسنگ سوسائٹی میں رہتے ہیں
ہماری کوئی تاریخ ہے نہ جغرافیہ
بس ایک سوک سینٹر ہے
اور ایک قبرستان
اور گلوریا جینز میں
وقت تھما نہیں، روشنی کی رفتار سے سڑپ رہا ہے

 

An Evening at Gloria Jeans

Today, after so many days
I have had coffee at Gloria Jeans…
and with the last sip
I have gulped down the evening too
My stomach is now full of
Chocolate solitude
and you, holding the paper mug
in your hands, silent and frigid
looking at me in awe, like always,
wondering, how on earth the time
that stood still before the genesis
has found its way to Gloria Jeans?
The evening, I had seen you
for the very first time
was just as murky as it is today
The history wasn’t born yet
On the Earth, there was geography
defined by the birds and the animals only
The time used to drift in shadows and you
awestruck and apprehensive like always
were looking at me
You never kept yourself aware of anything
You don’t even know that
my world is too small these days
like the realms of flora and pests
in which there are columns of marching ants
and the birds’ nests
snakes made of flexible plastic and
the flying and crawling insects
and a little offspring who plays
with the epoch of ice-age
No wonder if he does so
because, the children of cyber-age
play with the eras not with toys
and just like that the history begins
and comes to an end
Boat-houses and the waterways
and the cities full of painters and the sculptures
are established and then ransacked
and with the dead bodies of the kings
thousands of toadies get buried alive too
and just like that, time after time
centuries turn into despair

You don’t even remember
that I had seen you the second time
right in the middle of hostile lands
Stooping and crawling
in the underground tunnels
and in the abodes carved into the caves
where ventilation was made possible
through holes and the chimneys
Your dreams camouflaged
even in the deep slumber
and your lips tightly sealed with a grin
like, if the world was split into two halves
But now, the world has been divided
into so many parts that, to show it to someone
even the lines in a palm are not enough

And right here, at this very place
where this city is hustling and bustling
and we are sitting here in Gloria Jeans
I had seen you for the last time
here, there were only a few dwellings
there was a trail and a bend
where I was standing
With the worst defeats and disgraces
streets were deserted and the rooftops desolate
Smoke rising up from the trees and the abodes
and only a forlorn glimpse of you
The enemy had jammed all the communication
between hearts and the minds
The hills had denied the refuge to us too
and the clouds were bursting out of season

And today yet again – after so many ages
we have met at Gloria Jeans
and like always you don’t even know
that we live in the same housing society
We have no history, no geography
just one civic center and
a necropolis
and in Gloria Jeans
the time has not come to a standstill
it is striding on a lightening pace…

 

*****

 

Be Sociable, Share!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Connect with Facebook